جے کے این ایس ؍ جنوبی ضلع شوپیاں کے کاپرن اور بٹہ گنڈ گاؤں پر 20کے قریب بندوق برداروں کا دھاوا ، تین پولیس اہلکاروں کو بندوق کی نوک پر اغوا کرکے بعد میں انہیں گولیوں سے بوندھ کر رکھ دیا۔ مقامی لوگوں کے مطابق فوجی وردی میں ملبوس بندوق برداروں نے 12پولیس اہلکاروں کے رہائشی مکانوں پر دھاوا بولا تاہم صرف تین اہلکار ہی اُس وقت گھروں میں موجود تھے جن کا اغوا کیا گیا جبکہ پولیس اہلکار کے بھائی کو زد کوپ کے بعد زندہ رہا کیا گیا۔ عین شاہدین نے بتایا کہ مقامی لوگوں کو لگا کہ شائد فوج نے گاؤں میں جنگجو مخالف آپریشن شروع کیا ہے ۔ پولیس ترجمان کے مطابق عسکریت پسندوں نے تین پولیس اہلکاروں کا اغوا کرنے کے بعد انہیں قتل کیا ۔ جے کے این ایس کے مطابق شوپیاں کے کاپرن اور بٹہ گنڈ گاؤں میں اُس وقت سنسنی اور خوف ودہشت کا ماحول پھیل گیا جب جمعہ اعلیٰ الصبح 20کے قریب بندوق برداروں نے گاؤں کو محاصرے میں لے کرایک درجن کے قریب پولیس اہلکاروں کے رہائشی مکانوں پر دھاوا بول دیاجس دوران تین پولیس اہلکاروں اور ایس پی او کے بھائی کو اپنے ساتھ لے گئے تاہم مقامی لوگوں کے اسرار پر پولیس اہلکار کے بھائی کا زد کوپ کرنے کے بعد اُس کو رہا کیا گیا۔ عین شاہدین نے بتایا کہ جدید ہتھیاروں سے لیس فوجی وردی میں ملبوس بندوق برداروں اور مقامی لوگوں کے درمیان کئی منٹوں تک گفت شنید ہوئی ۔ مقامی لوگوں نے بندوق برداروں سے استدعاد کی کہ وہ پولیس اہلکار وں کو چھوڑ دیا تاہم انہوں نے ایک نہ سنی اور تینوں کو اپنے ساتھ لے کر پاس کے گاؤں میں ہی گولیوں سے بوندھ کر رکھ دیا۔ عین شاہدین کے مطابق عسکریت پسند لگ بھگ ایک درجن پولیس اہلکاروں کے گھروں میں گھس گئے تاہم صرف تین اہلکار ہی گھروں میں موجود تھے جبکہ باقی اہلکاروں کے گھر والوں کا زد کوپ کیا گیا۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ اگر چہ بندوق برداروں سے استدعا کی گئی کہ وہ پولیس اہلکاروں کو چھوڑ دے کیونکہ وہ بے گناہ ہے تاہم فوجی وردی میں ملبوس بندوق برداروں نے مقامی لوگوں کی ایک نہ سنی اور وہاں سے فوری طور پر رفوچکر ہو گئے اور دانگام کے قریب سیب کے باغ میں تین پولیس اہلکاروں کو گولیوں سے بوندھ کر رکھ دیا۔ تین گھنٹے کے بعد کاپرن شوپیاں میں خبر جنگل کے آگ کی طرح پھیل گئی کہ دانگام کے قریب تین پولیس اہلکاروں کی گولیوں سے چھلنی نعشیں برآمد ہوئی ہے جس کے بعد لوگوں کی کثیر تعداد نے گاؤں کی طرف پیش قدمی شروع کی اور تین اہلکاروں کو آبائی گاؤں پہنچایا اور بعد میں انہیں ضلع پولیس لائنز شوپیاں روانہ کیا گیا ۔ نمائندے کے مطابق تعزیتی گلباری تقریب کے بعد تین پولیس اہلکاروں کی آخری رسومات ادا کی گئیں جس میں لوگوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی ۔ پولیس ترجمان کی جانب سے جاری بیان کے مطابق عسکریت پسندوں نے کاپرن اور بٹہ گنڈ شوپیاں گاؤں میں تین پولیس اہلکاروں کا اغوا کرنے کے بعدا نہیں بے دردی کے ساتھ قتل کیا۔ ترجمان کا مزید کہنا تھا کہ ملوث عسکریت پسندوں کی شناخت کیلئے کارروائی شروع کی گئی ہے۔ ادھر ضلع پولیس لائنز شوپیاں میں ایک تعزیتی گلباری تقریب منعقد ہوئی جس میں پولیس کے اعلیٰ آفیسران نے شہید ہونے والے تین پولیس اہلکاروں نثار احمد ، فردوس احمد اور کلدیپ سنگھ کے تابوت پر گلباری کی اور خراج پیش کیا۔ جمعہ کے روز ضلع پولیس لائنز شوپیاں میں منعقدہ تعزیتی گلباری تقریب میں آئی جی کشمیر ایس پی پانی نے شہید پولیس اہلکاروں کے ترنگے سے لپٹے جسد خاکی پر گلباری کی اورانہیں خراج عقیدت پیش کیا۔ اس موقعے پر ڈی آئی جی جنوبی کشمیر ، ایس ایس پی شوپیاں، ، ایس ایس پی اونتی پورہ ، ایس ایس پی کولگام ، ایس ایس پی پلوامہ اور دوسرے آفیسران بھی موجود رہے ۔

LEAVE A REPLY