Tuesday, September 27

کھیل: خوشحالی کا سہارا

کشمیر میں 2011 میں ہفتہ کی شام کو ارباز دوڑتا ہوا عمران کے پاس آیا۔ اپنے ایڈمز ایپل سے چیختا ہوا اسے ٹوٹے ہوئے ڈش اینٹینا کے بارے میں بتاتا رہا۔ یہ سن کر عمران کل کے موسمی طوفان پر تنقید کرنے لگا۔ وہ دونوں ڈش اٹھا کر ٹی وی کی مرمت کی دکان پر لے گئے، حالانکہ بھارت اور سری لنکا کے درمیان ورلڈ کپ کا فائنل میچ شروع ہو چکا تھا۔ دونوں بچے پریشان ہو رہے تھے۔ کچھ سکون تھا، کیونکہ وہ ڈش کی مرمت کے دوران مرمت کی دکان میں میچ دیکھ سکتے تھے۔ ارباز بے چینی سے مرمت کی دکان پر ٹی وی ٹھیک کرنے والے مکینک سے کہہ رہا تھا، جو پرانا تھا اور اس کی تصویر دھندلی تھی۔ عمران خاموش تھا اور صرف اسکور پڑھنے کے لئے ٹی وی اسکرین کی طرف دیکھتا رہا۔ 6 گھنٹے کے بعد بالآخر ڈش ٹھیک کر دی گئی، اور دونوں بچے اپنے گھر کی طرف بھاگنے لگے، اینٹینا لگا کر میچ دیکھنے کے لئے گھر میں گھسنے لگے، ٹی وی آن کر دیا گیا، اور حیرانی کے عالم میں دھونی نے گیند کو ایک چھکے کیلئے میدان سے باہر پھینک دیا۔ چھکا اور بھارت نے میچ جیت لیا، ہر طرف خوشی کے آنسو بہنے لگے، ارباز خوشی سے چیخ رہاتھا، جب کہ عمران بے حس ہو گیا۔ عمران جذبات سے مغلوب ہو گیاجب انہوں نے اسٹیڈیم میں اپنے چیمپئنز کے لئے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے دیکھا۔ کشمیر ہمیشہ سے ہی ناقابل یقین ہنر اور سراسر محنت کی ریاست رہی ہے، لیکن اسے قومی تارکین وطن کی طرف سے بہت کم پہچان ملی ہے۔ افراتفری اور انتشار پھیلانے والوں نے کشمیریوں کو کبھی کسی میدان میں آگے نہیں بڑھنے دیا۔

11سال کے بعد، میںکشمیر میں ایک بار پھر امید اور روشنی کی کرن دیکھ سکتا ہوں، خاص طور پر آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد، جس نے مرکزی حکومت کو کشمیر کو ہندوستان کے مرکزی دھارے میں لانے اور ضم کرنے کا موقع فراہم کیا۔ ان دنوں جب میں اپنا سوشل میڈیا اکاو ¿نٹ کھولتا ہوں تو میں اپنے کشمیری بھائیوں اور بہنوں کے کارناموں سے بھرا ہوا دیکھتا ہوں۔ اویس یعقوب، نادیہ نگہت، عمران ملک، تاج الاسلام، دانش فاروق، اور بہت سے دوسرے کشمیر کے نوجوان ذہنوں کے لئے روشنی کے فرشتے بن چکے ہیں۔ مجھے کشمیر کی سیاسی صورتحال کے بارے میں اچھی طرح سے آگاہ نہیں ہے، یہ کیسے سامنے آئے گا، اور جب تک یہ پیدا شدہ معمولات برقرار رہیں گے۔ لیکن مجھے یقین ہے کہ ان کی کامیابیوں نے کشمیر کے مضافات میں رہنے والے، پسماندہ اور اس دنیا میں جگہ تلاش کرنے کی کوشش کرنے والے ایک گھٹیا بچے کو امید دی ہے۔ اس ملک کے عظیم ذہن کشمیریوں کی جدوجہد سے ہمیشہ آگاہ رہے اور 1970،1980 وغیرہ میں ایک مقامی کشمیری کی عمومی ذہنیت ترقی کی طرف تھی، جس کی پیشین گوئی ہر کسی نے کشمیر کے خصوصی ریاست ہونے کے بدلے میں کی تھی۔ لیکن میں نے جو دیکھا وہ سیاسی جماعتیں نئی دہلی اور کشمیر کے درمیان صرف ایک نالی کا کام کرتی ہیں تاکہ مرکزی حکومت کی طرف سے فراہم کردہ فوائد اور فنڈز اپنی جیبیں بھر سکیں۔ جب بھی نئی دہلی نے کسی ترقیاتی منصوبے کی کوشش کی، پی ڈی پی اور این سی نے ہمیشہ اسے مسترد کر دیا، اس نکتے کا حوالہ دیتے ہوئے کہ نئی دہلی کشمیر کی صورتحال اور افراتفری کو کبھی نہیں سمجھے گی۔

کھیلوں نے ہمیشہ ذہنوں، مذہب، علاقے، ذات پات، مسلک وغیرہ کو جوڑنے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ گزشتہ تین سالوں میں کشمیر میں کھیلوں کے بنیادی ڈھانچے کی مختلف ترقیات یو ٹی حکومت کی کوششوں کے بارے میں بہت کچھ بتاتی ہیں۔ جموں و کشمیر حکومت ریاست بھر میں کھیلوں کی جدید سہولیات تعمیر کر رہی ہے جس کا مقصد یونین ٹریٹری کے خواہشمند کھلاڑیوں کے لئےکھیلوں کو پنچایت سطح تک پہنچانا ہے۔ ایل جی انتظامیہ نے جموں و کشمیر میں عالمی معیار کے کھیلوں کا بنیادی ڈھانچہ قائم کرنے کے لیے متعدد اقدامات کیے ہیں۔ جموں و کشمیر کو کھیلوں کا پاور ہاو ¿س بنانے کے لئے حال ہی میں ایک اسپورٹس پالیسی متعارف کرائی گئی ہے۔ مقامی ایتھلیٹس کو ہر قسم کا تعاون مل رہا ہے کیونکہ وہ مختلف کھیلوں کے شعبوں میں یونین ٹریٹری اور ملک کو فخر کرنے کے لئے سخت محنت کر رہے ہیں۔ کھیلوں کی سرگرمیاں سال بھر منعقد ہوتی ہیں، جبکہ بڑے پیمانے پر بنیادی ڈھانچے کا کام مکمل کیا جا رہا ہے۔ نہ صرف کرکٹ اور فٹ بال جیسی سرگرمیوں پر زور دیا جاتا ہے بلکہ والی بال، کھو کھو، کبڈی، پانی کے کھیل اور سرمائی کھیل جیسے کھیلوں پر بھی زور دیا جاتا ہے، جنہیں پہلے نظر انداز کر دیا گیا تھا۔ جموں و کشمیر کے لیے کھیلوں کا بجٹ ملک کی کئی دیگر ریاستوں سے زیادہ ہے، اور بنیادی ڈھانچے کو ممکنہ حد تک اعلیٰ ترین سطح پر اپ گریڈ کیا جا رہا ہے، جموں و کشمیر حکومت نوجوانوں کے لیے ایک پلیٹ فارم مہیا کرنے کے لیے بے چین ہے۔ آج، یونین ٹریٹری میں کھیلوں کا شعبہ تیزی سے ترقی کر رہا ہے۔ نوجوانوں کو نچلی سطح پر عالمی معیار کی سہولیات اور کوچنگ فراہم کی جا رہی ہے تاکہ وہ کھیلوں کے مختلف شعبوں میں اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کر سکیں۔ حکام جموں و کشمیر کو ملک کا کھیلوں کا دارالحکومت بنانے کے لیے اپنی کوششوں کو دوگنا کر رہے ہیں۔

لیفٹیننٹ جنرل منوج سنہا نے حال ہی میں کھیلوں کی نئی سہولیات مقامی نوجوانوں کے لیے وقف کیں اور 18.10 کروڑ روپے کے کھیلوں کے بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں کا افتتاح کیا۔ جن منصوبوں کا افتتاح کیا گیا ان میں کھیل گاون نگروٹہ میں 5 کروڑ روپے کی لاگت سے مصنوعی فٹ بال ٹرف شامل ہے۔ بھور کیمپ چٹھہ میں ایک کروڑ کا منی اسٹیڈیم اور پورمنڈل میں دو کروڑ کا کھیل کا میدان۔ بھور کیمپ کے منی اسٹیڈیم میں کرکٹ، والی بال اور کبڈی جیسے کھیلوں کی میزبانی سے5000 نوجوانوں کو فائدہ ہوگا۔ لیفٹیننٹ گورنر (ایل جی) منوج سنہا نے الٰہی باغ انڈور اسپورٹس اسٹیڈیم کا افتتاح کیا جس کا مقصد شہر کے نوجوانوں میں ایک متحرک اسپورٹس کلچر کو فروغ دینا ہے۔ یہ کامیابیاں اور کاوشیں میرے دل کو خوشی اور مسرت سے بھر دیتی ہیں کہ ہماری اگلی نسل کو ایسے مواقع فراہم کیے جا رہے ہیں جن سے ہم انکار کر رہے تھے۔ لیکن میں خوفزدہ بھی ہوں کیونکہ میں ایک عام انسان ہوں جسے جب بے بسی کے سائے سے باہر نکلنے کی امید دی جاتی ہے تو ہمیشہ اس بارے میں شکوک و شبہات میں مبتلا رہتا ہے کہ آیا یہ قائم رہے گا یا یہ محض ایک عارضی لگاو ¿ ہے جس سے ہمیں بچنا چاہیے۔ اب تک، حکومت نے مسلسل میرے اعتقاد کے نظام کو توڑا تھا، اور میں اپنے کوکون میں پیچھے ہٹ گیا تھا، یہ مانتے ہوئے کہ ایک کشمیری اگر کشمیر میں رہتا ہے تو کبھی کامیابی حاصل نہیں کر سکتا۔ اگر اس کے پاس تعاقب کرنے کے خواب ہیں تو کسی کو اس حالت کو چھوڑ دینا چاہیے، لیکن حالیہ پیش رفت نے میرا ذہن بدل دیا ہے، اور کھیلوں نے اس ریاست کو ایک انتہائی ضروری ذہنیت فراہم کی ہے تاکہ ہمارے نوجوانوں کی توانائی کو افراتفری اور خود کو تباہ کرنے والی سرگرمیوں کی بجائے پیداواری چیز میں منتقل کیا جا سکے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: